6

غزل ۔ از آسی انصاری

کل نہیں سنبھلتا تھا جن سے ایک پیمانہ

آج ان کے ہاتھوں میں ہے نظامِ میخانہ

تھا جو کل تلک میرا اب ہوا وہ بیگانہ

لٹ گئی مری دنیا بن گیا میں افسانہ

وقت کی بہاروں میں کھو کے اس قدر بھولے

جب خزاں کا دور آیا تب انھوں نے پہچانا

رہ پہ عشق کی چل کر ہم کہاں پہ آپہنچے

نہ ہے یاں کوئی اپنا نہ ہی کوئی بیگانہ

درمیانِ الفت یہ جو کھڑی ہیں دیواریں

توڑ کر انہیں اکدن جا ملے گا دیوانہ

آ تجھے چھپا لوں میں آشیانۂ دل میں

کون جانے کل کیا ہو آج دن ہے مستانہ

پیار سے جو مانگے تو کردوں آرزو پوری

عشق کا…

غزل ۔ از آسی انصاری

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں