29

پاکستان کے متعدد بجٹ اقدامات پر امریکن بزنس کونسل کے اراکین نے اعتراض کر دیا

امریکن بزنس کونسل پاکستان کے صدر سمیع احمد نے کہا کہ سرمایہ کاروں کو راغب کرنے، ملازمت کے مواقع بڑھانے اور معیشت کو ترقی دینے کے لیے ضروری ہے کہ معاشی پالیسیاں شفاف، مستقل اور سرمایہ کاری کے لیے معاون ہوں اور ان پالیسیوں پر عمل درآمد ہو، ٹیکس پالیسی اقدامات میں کاروبار کے پورے ماحول پر اس کے اثرات کا احاطہ کیا جانا چاہیے تاکہ کاروبار میں آنے والی لاگت بہتر ہو اور موجودہ ٹیکس ادا کرنے والوں پر بوجھ نہ پڑے۔

اے بی سی سرمایہ کاروں کے گروپ کا یہ خیال بھی ہے کہ بجٹ کے کچھ اقدامات سرمایہ کاری کے لیے مفید ہیں جیسے کارپوریٹ ٹیکس ریٹ میں کمی تاہم اضافی ٹیکسوں نے اس فائدے کو ختم کردیا ہے، اس کی بہترین مثال 2015-16 بجٹ میں سپر ٹیکس ہے، وفاقی حکومت نے 4فیصد سپر ٹیکس، ایک بار بینکنگ کمپنیز پر نافذ کیا اور 3 فیصد انفرادی طور پر اور ایسے افراد پر جن کی آمدنی 500 ملین روپے ہو، یہ ٹیکس عارضی طور پر بے گھر ہونے والے افراد کی بحالی کے لیے فنڈ جمع کرنے کے لیے تھا تاہم یہ اب تک جاری ہے، مزید کچھ تجاویز جو مجوزہ مالیاتی بل 2017/18 میں ہیں جیسے ایسی کمپنیوں پر 10 فیصد ٹیکس جو اپنے منافع کا 40 فیصد ڈیویڈنڈ کے ضمن میں تقسیم نہیں کرتی ہیں بھی شامل ہے جو کمپنیوں کی ترقی کو بری طرح متاثر کرے گا کیونکہ ان کمپنیوں کے پاس فنڈز نہیں ہوں گے جو وہ اپنے توسیعی منصوبوں پر خرچ کرسکیں،دستاویزی معیشت کی حوصلہ افزائی کے لیے متعارف کرائے جانے والے ٹیکس کریڈٹ کے خاتمے اور اس چھوٹ کو واپس لینے سے برعکس اثرات مرتب ہوں گے۔

اسی طرح 1 فیصد سے ٹیکس کو بڑھا کر 1.25 فیصد کرنا بھی کمپنیوں کے لیے نامناسب ہے، اس سے موثر ٹیکس کی شرح بڑی مینوفیکچرنگ کمپنیوں کے لیے کارپوریٹ ریٹ 300 فیصد سے بڑھ جائے گی، اس سے پاکستان میں کمپنیوں کا ٹیکس ریٹ 300 فیصد سے زیادہ ہوجائے گا جو دیگر ملکوں کے مقابلے میں سب سے زیادہ ہے جیسے سری لنکا میں یہ 15 فیصد، بنگلادیش میں 25 فیصد اور ویت نام میں 22 فیصد ہے۔

یاد رہے کہ اے بی سی پاکستان میں سرمایہ کاری کرنے والا سب سے بڑے گروپوں میں سے ایک ہے جس کے 67 رکن ہیں اور ان میں سے اکثریت 500 فورچیون کمپنیوں کی ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں