22

ملک پر واجب الادا قرضوں میں چودہ ارب ساٹھ کروڑ ڈالر کا اضافہ

عالمی ریٹنگ ایجنسی موڈیز کا کہنا ہےکہ پاکستان پر واجب الادا قرضے رواں مالی سال کےاختتام پر اناسی ارب ڈالر ہوجائیں گے، جوکہ ملکی معیشت کیلئے تشویشناک بات ہے، ملکی معشیت پر جاری رپورٹ میں موڈیز کا کہنا ہے کہ قرضوں میں اضافہ ملکی معاشی کمزوری کا مظہر ہے۔

موڈیز نے پاکستان کی مالیاتی پوزیشن کو منفی اور ہائی رسک قرار دیا ہے۔

موڈیز کےمطابق مالی سال 2013 کے اختتام پر بیرونی قرضوں کا حجم چونسٹھ ارب چالیس کروڑ ڈالر تھا، جی ڈی پی کےلحاظ سے اس کا تناسب چھیاسٹھ اعشاریہ پانچ فیصد ہوگیا ہے، ملکی قانون میں اس کو 60 فیصد تک محدود رکھنا ہوتا ہے

گذشتہ روزریٹنگ ایجنسی موڈیز نے پاکستانی معیشت کی ریٹنگ جاری کی اور پاکستان کی ریٹنگز کو موجوہ بی تھری پر برقرار رکھا گیا ہے، موڈیز کا کہنا تھا کہ بہتر شرح نمو، مالیاتی خسارے اور افراط زر میں کمی پاکستان کی ریٹنگز کو برقرار رکھنے کا سبب بنی ہیں۔

موڈیز کے مطابق  ادارے نے حکومتی قرض گیری اور بیرونی کھاتوں کے دباؤ کو پاکستانی معشیت کے لیے رسک قرار دیا ہے۔ موڈیز کا کہنا ہے کہ پاکستان میں جاری سیاسی عدم استحکم پاکستانی معیشت کے لیے چیلینج ہے، ترسیلات زر، برآمدات میں کمی اور درآمدات میں اضافے ملکی بیرونی کھاتوں پر دباؤ کا باعث بن رہا ہے تاہم سی پیک منصوبہ پاکستانی معیشت میں بہتر تبدیلی لائے گا۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں